• کتنی مدت کے بعد تجھ سے ملے
    مسکراتا ہے پیار آنسو سا
    بشیر بدر
  • بھرے کچھ آنکھ میں آنسو پڑے کچھ حلق میں چھالے
    قفس میں یہ میسر مجھ کو آب ودانہ آتا ہے
    داغ
  • کھڑی ہیں موقف فریاد پر آنکھوں میں آنسو ہیں
    نظر اُسکے کرم پر دل میں حسرت ہائے پنہانی
    عزیز لکھنؤی
  • اس طرح ہم نے نہیں دیکھے کہیں سلک گہر
    جس طرح آنسو نکلتے ہیں تسلسل چشم سے
    دیوان زادہ حاتم
  • رونا بھی تھم گیا ترے غصہ کے خوف سے
    تھی چشم ڈیڈیائی پر آنسو نہ ڈھل سکے
    سوز
  • خزاں سے کرتے ہیں غربت نصیب ذکر وطن
    تو چشمِ صبح میں آنسو اُبھرنے لگتے ہیں
    نامعلوم
First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 29

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter