• ترک خونریز ہیں آنکھیں تو نگہ ہے سفاک
    ایک کیا آپ کو دیکھا کئی رہزن دیکھے
    الف لیلہ
  • آنکھیں پتھرا گئیں جوں سنگ سلیمانی آہ
    نکلے آنسو تو یہ الفت نے نچوڑے پتھر
    جرأت
  • کب سے آنکھیں تلاشتی ہیں اُسے
    ایک دن، جو کسی برس میں نہیں
    امجد اسلام امجد
  • درسگاہ بزم امکاں کے پھر سبق روشن ہوئے
    کھل گئیں آنکھیں سی مضموں ادق روشن ہوئے
    برق دہلوی
  • آنکھیں مری کرے جو منور جمال یار
    گھی کے چراغ طور کے اوپر جلاؤں میں
    آتش
  • رو رو کے ان کی یاد میں آنکھیں کروں سفید
    بس یوں ہی صبح ہوگی پب انتظار کی
    الماس درخشاں
First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 61

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter