Shair

شعر

میں آزما چکا ہوں نہ کھانا کوئی فریب
اس بیوفا کا قول و قسم دم سے کم نہیں

(شہیدی(کرامت علی))

کے بیوفا کوں کیا آشنا کیا ہے
تو آبرو نیں کس گھاٹ لا اتارا

(دیر)

لفظوں کی اک پتنگ تھی بڑھ کر نکل گئی
کس بیوفا کو دل سے لگایا تھا بھول میں

(ماجد ‌الباقری)

تو ہے کس ناحیہ سے اے دیار عشق کیا جانوں
ترے باشندگاں ہم کاش سارے بیوفا ہوتے

(میر تقی میر)

رکھے ہیں میر ترے منہ سے بیوفا خاطر
تری جفا کے تغافل کی بدگمانی کی

(میر تقی میر)

ظالم وہ بیوفا ہے عدو جس کے رشک سے
اتنا کچھ آگیا خلل اپنے نباہ میں

(مومن)

First Previous
1 2
Next Last
Page 1 of 2

Poetry

Pinterest Share