Shair

شعر

جو دل کہ کاوشِ مژگاں نے ریز ریز کئے
جگر پہ آرہ ابرو نے دانت تیز کئے

(نکہت)

آئی تھی تجھ پہ اے دل صد چاک کیا بلا
دی تونے راہ زلف میں اس کی جو شانے کو

(قائم)

دل ہے ان کا کہیں دماغ کہیں
گھر میں ڈھونڈو تو بھونی بھانگ نہیں

(امین عظیم آبادی)

تڑیوں تو ہے طبیعت قاتل کے برخلاف
اور صبر کر رہوں تو ہے اس دل کے برخلاف

(حسرت ، محمد حیات)

دل و جاں کوں مجھ غیر تے کاڑ دے
زباں کوں ترے ذکر کی باڑ دے

(نصرتی)

سب نظر آئی مجھے شوخ کے سینے کی بہار
کھٹا میٹھا سا لگا ہونے مرا دل اک بار

(نظیر)

First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 740

Poetry

Pinterest Share