• ظلم مت کر منجن! ولی اوپر
    تجھ کوں ہے شاہ کربلا کی قسم
    ولی
  • ہے ظلم اس پری پر ہم غش نہ ہوویں جس کے
    یہ جھمکے بندے بالی توڑے کڑے چھڑے ہیں
    انشا
  • ظلم کا لگا لگا کر آشیانوں کو نہ چھیڑ
    بلبلیں صیاد چپ ہیں بے زبانوں کو نہ چھیڑ
    دیوانجی
  • تکلّف بر طرف نظارگی میں بھی سہی لیکن
    وہ دیکھا جائے، کب یہ ظلم دیکھا جائے ہے مجھ سے
    غالب
  • کبھی رہے گا نہ گنجینہ ظلم کیشوں کا
    لگے گی آگ قرابین کے خزانے میں
    ریاض البحر
  • خدایا داد لے ہور داد لے اس ظالماں کن ھے
    کہ جد نہیں سو یتیماں پر جفا ہور ظلم ڈھایا ہے
    قلی قطب شاہ
First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 16

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter