• یہ ذکر تھا کہ آگیا خولی تلخ کام
    لایا سنان ظلم پہ اک فرق سرخ فام
    شمیم
  • کیا ظلم کیا بیجا مارا جیون سے اُن نے
    کچھ ٹھور بھی تھی اس کی کچھ اس کا ٹھکانا تھا
    میر تقی میر
  • مجھ پہ کیا کیا ظلم ہیں اوبے وفا اب کیا کہوں
    آپھنسے کی بات ہے اس کے سوا اب کیا کہوں
    شوق قدوائی
  • نھیں جھیرا زمانے کے ظلم کا
    نہیں آخر زمانے کے ستم کا
    یوسف زلیخا (امین)
  • ظلم ہے‘ قہر ہے‘ قیامت ہے
    غُصے میں اُس کے زیر لب کی بات
    میر تقی میر
  • سو اس کو ظلم ستی مل کے شامی بدذات
    کیے شہید ہزاروں جفا ستی ہیہات
    کرم علی
First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 16

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter