Shair

شعر

پڑی ایسی دی ہے چنچل ہور چٹور
نے ڈر ہے وہ عورت جنم کی دھنڈور

(یوسف زلیخا)

یو اس چوری کی عورت ہے اندھاری رات نڑوے پر
چھنالا کرنے جاتی ہے ندی کے پار چوری سوں

(ہاشمی)

و فر زند سو ہے یہی نو نہال
وو عورت امانت ہے اس کی حلا

(غواصی)

قباحت سوں آزاد دے بے شمار
وہیں گھر تے عورت کوں بھایا بہار

(غواصی)

ہوئی پیدا عورت یو دو کام کوں
بدھانی کی ہے بیل ہور کام کوں

(ہاشمی)

ہے عورت اک لطیف جنس اپنے مرد کے لیے
یہ فطرت اس کی ہے کہ اس کی سمت اس کا دل کھنچے

(عالم)

First Previous
1 2 3 4 5
Next Last
Page 1 of 5

Poetry

Pinterest Share