• گزار شہر وفا میں سمجھ کے کر مجنوں
    کہ اس دیار میں میر شکستہ یا بھی ہے
    میر
  • وہ با وفا کہ اہل وفا جن کو دیں خراج
    ایسے حسیں کہ حسن میں یوسف سے لیں وہ باج
    دبیر
  • تم بھی مجبور ہو ہم بھی مجبور ہیں
    بے وفا کون ہے، باوفا کون ہے
    بشیر بدر
  • وفا کے دشت میں رستہ نہیں ملا کوئی
    سوائے گرد سفر ، ہم سفر نہیں آیا
    امجد اسلام امجد
  • پہلے مرے گا آپ سے یہ با وفا غلام
    رو کر کہا کہ ہاں یہی ہوے گا لا کلام
    انیس
  • بڑے جو ہیں وہ بے ثمر جو خرد ہیں وہ خیرہ سر
    عطا نہیں کرم نہیں ادب نہیں وفا نہےں
    اکبر
First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 43

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter