Shair

شعر

نہ جانے کون سی ساعت چمن سے بچھڑے گا
کہ آنکھ بھر کے نہ پھر سُوئے گلستاں دیکھا

(قائم)

قائم ہے کیا ہلاہل و آب خضر میں فرق
آجائے بزم دوست میں جو کچھ سو کیجیے نوش

(قائم)

سنگ کو آب کریں پل میں ہماری باتیں
لیکن افسوس یہی ہے کہ کہاں سستے ہو

(قائم)

تھی خلقت سے اس آب وگل کی بری
نہ جانے کہ تھی حور یا وہ پری

(قائم)

سیل آتش میں غرق ہودو جہاں
جائے گر پھوٹ آبلہ دل کا

(قائم)

بک بک کے جوں جرس میں زباں آبلہ کی آہ
سمجھانہ کوئی یاں پہ مرے مدعا کے تئیں

(قائم)

First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 124

Poetry

Pinterest Share