• ہم ہوئے‘ تم ہوئے کہ میر ہوئے
    اس کی زلفوں کے سب اسیر ہوئے
    میر تقی میر
  • چلتے ہو تو چمن کو چلئے سنتے ہیں کہ بہاراں ہے
    پھول کھلے ہیں پات ہرے ہیں کم کم باد و باراں ہے
    میر تقی میر
  • مجرم ہوئے ہم دل کے ورنہ
    کس کو کسو سے ہوتی نہیں چاہ
    میر تقی میر
  • یاد اس کی اتنی خوب نہیں میر باز آ
    نادان پھر وہ دل سے بھلایا نہ جائے گا
    میر تقی میر
  • تیرے فراق میں جیسے خیال مفلس کا
    گئی ہے فکر پریشان کہاں کہاں میری
    میر تقی میر
  • موئے سہتے سہتے جفا کاریاں
    کوئی ہم سے سیکھے وفاداریاں
    میر تقی میر
First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 290

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter