یہاں مرنے کی پابندی وہاں جینے کی پابندی

متاع بے بہا ہے سوزودرد و آرزو مندی
مقام بندگی دے کر نہ لوں شان خداوندی

تیرے آزاد بندوں کی نہ یہ دنیا نہ وہ دنیا
یہاں مرنے کی پابندی وہاں جینے کی پابندی

گزر اوقات کر لیتا ہے یہ کوہ و بیاباں میں
کہ شاہیں کیلئے ذلت ہے کار آشیاں بندی

وہ فیضان نظر تھا یا کہ مکتب کی کرامت تھی
سکھائے کس نے اسماعیل کو آداب فرزندی

میری مشاطگی کی کیا ضرورت حسن معنی کو
کہ فطرت خود بخود کرتی ہے لالے کی حنا بندی

 


Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter