• چاہت بتوں کی ہے کہ خدائی کا روگ ہے
    آزاد دیر عشق کے آزار سے ہوا
    رشک
  • آنسو کو کبھی اوس کا قطرہ نہ سمجھنا
    ایسا تمہیں چاہت کا سمندر نہ ملے گا
    بشیر بدر
  • نام اُلفت کا نہ لوں گا جب تلک ہے دم میں دم
    تو نے چاہت کا مزا اے فتنہ گر دکھلادیا
    مومن
  • کسِ نے چاہت میں نہیں دکھ پائے
    پیار کرکے کِسے ایدا نہ ہوئی
    الماس ِ درخشاں
  • چاہت کی گرفتار بٹیریں، لوے، تیتر
    کبکوں کے تدرووں کے بھی چاہت میں بندھے پر
    نظیر
  • اس کی چاہت کی چاندنی ہوگی
    خوب صورت سی زندگی ہوگی
    بشیر بدر
First Previous
1 2 3 4
Next Last
Page 1 of 4

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter