کسی اورغم میں اتنی خلشِ نہاں نہیں ہے غمِ دل مرے رفیقو، غم رائگاں نہیں ہے کوئ ہم نفس نہیں ہے،کوئ رازداں نہیں ہے فقط ایک دل تھا اب تک سو وہ مہرباں نہیں ہے مری رُوح کی حقیقت مرے آنسوؤں سے پوچھو مرا مجلسی تبسم مرا ترجماں نہیں ہے کسی آنکھ کو صدا دو کسی زُلف کو پکارو بڑی دھوپ پڑ رہی ہے کوئ سائباں نہیں ہے انہی پتھروں پہ چل کر اگر آسکو تو آ ؤ مرے گھر کے راستے میں کہیں کہکشاں نہیں ہے مصطفٰے زیدی


Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter