Shair

شعر

مجھ سے بچھڑ کے یوسفِ بے کارواں ہے تو
مجھ کو تو خیر درد ملا‘ تجھ کو کیا ملا

(احمد ‌ندیم ‌قاسمی)

نالہ گرم نہ تھا لب پہ دم سرد نہ تھا
غم نہ تھا رنج نہ تھا کوفت نہ تھی درد نہ تھا

(امیر مینائی)

بس طبیب اُٹھ جا مری بالیں سے مت دے درد سر
کام جاں آخر ہُوا اب فائدہ تدبیر کا

(میر تقی میر)

خام مضموں مرثیہ کہنے سوں چپ رہنا بھلا
پختہ درد آمیز عزلت نت توں احوالات بول

(عزلت)

خنجر کہ تیرے سامنے ببر و پلنگ ناخن چھپا
رنگ زرد ہو تن تاپ پھر سب عمر درد سر چڑے

(شاہی،علی عادل شاہ ثانی)

اوسے باپ لاڑاں سوں پالا بہوت
درد ہور دوکھ میں سنبھالا بہوت

(رضوان شاہ و روح افزا)

First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 65
Pinterest Share