• پیاسے گو بے وطن کو ستاتے ہو ظالموں
    دکھتا کلیجا اور دکھاتے ہو ظالموں
    شمیم
  • وطن کی جس سے سبکی ہو نہ لب تک بھی وہ حزف آئے
    کہیں ہندوستاں کے نام پر دھّیا نہ آ جائے
    اختر (ہری چند)
  • کیا ہے عشق نے میری دُرونی میں وطن اپنا
    کہ ہر دم ڈھونڈتے پِھرتے اچھو دامِ سخن اپنا
    حسن شوق
  • کوئی مقام نظر آگیا جو بن کا سا
    کہا جنون نے یہ ہے مرے وطن کا سا
    شوق قدوائی
  • کیا پھرے وہ وطن آوارہ گیا اب سو ہی
    دل گم کر دہ کی کچھ خیر خبر مت پوچھو
    میر
  • پہنچوں گتی وطن سے جو میں زہرا کے چمن میں
    جان آئے گی دیدار مسیحا سے بدن میں
    بعئن (منظور حسین )
First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 11

Android app on Google Play
iOS app on iTunes
googleplus  twitter