Shair

شعر

میں نہ جائوں کیسے نوراں تھے ہوئی تو آفریں
سب پنگھی چھوڑے ہیں تیرے جوت تھے اپنا وطن

(قلی قطب شاہ)

کیا ہے عشق نے میری دُرونی میں وطن اپنا
کہ ہر دم ڈھونڈتے پِھرتے اچھو دامِ سخن اپنا

(حسن شوق)

کیا پھرے وہ وطن آوارہ گیا اب سو ہی
دلِ گم کردہ کی کچھ خیر خبر مت پوچھو

(میر تقی میر)

بچوں موئی ہوں منہ نہ کسی کو دکھاؤں گی
اب دشت کربلا سے وطن کو نہ جاؤں گی

(مونس)

آہ جس روز سے چھوٹا ہے وطن غنچے کا
نہ کھلا دل کیے یہاں لاکھ جتن غنچے کا

(آغا جان دہلوی)

مجمع اہل وطن سے کوئی بیروں نہ کرے
آسماں صحبت احباب دگر گوں نہ کرے

(بیخقد (ہادی علی))

First Previous
1 2 3 4 5 6 7 8 9 10
Next Last
Page 1 of 11

Poetry

Pinterest Share